Skip to content
Home » Nadeem Malik Live – Exclusive Interview of Finance Minister Shaukat Tarin – #SAMAATV – 23 Nov 2021 finance minister

Nadeem Malik Live – Exclusive Interview of Finance Minister Shaukat Tarin – #SAMAATV – 23 Nov 2021 finance minister



Nadeem Malik Live
Mon to Thurs | 8pm to 9pm
Nadeem Malik asks the tough but unavoidable question to grill the power brokers in Pakistan over their actions and decision
Nadeem Malik is a senior journalist who hosts the show Nadeem Malik Live on SAMAA TV.

SAMAA Network :

SUBSCRIBE to get the latest SAMAA News content:

► SAMAA News YouTube Channel:
► SAMAA Originals YouTube Channel:
► SAMAA MONEY YouTube channel:
► SAMAA SPORTS YouTube channel:
► DEEN KA SAMAA YouTube channel:

Keep watching SAMAA!
Like and Follow us on Official Social Platforms:

SAMAA News Programs :

• SAMAA NEWS Headlines –
• Nadeem Malik Live –
• 7 se 8 –
• Awaz –
• Awam Ki awaz-
• Sawal –
• News Beat –
• Agenda 360 –
• Hum Log –
• Emergency Ward –
• Court No 5 –
• Crime Scene –
• Sports Action –
• Qutb Online –
• Naya Din –

#NadeemMalik
#NadeemMalikLive
#samaatv
#nadeemmalikshow
#samaatv
#samaanadeemmalik .

Images related to the topic finance minister

Nadeem Malik Live - Exclusive Interview of Finance Minister Shaukat Tarin - #SAMAATV - 23 Nov 2021

Nadeem Malik Live – Exclusive Interview of Finance Minister Shaukat Tarin – #SAMAATV – 23 Nov 2021

Search related to the topic Nadeem Malik Live – Exclusive Interview of Finance Minister Shaukat Tarin – #SAMAATV – 23 Nov 2021

#Nadeem #Malik #Live #Exclusive #Interview #Finance #Minister #Shaukat #Tarin #SAMAATV #Nov
Nadeem Malik Live – Exclusive Interview of Finance Minister Shaukat Tarin – #SAMAATV – 23 Nov 2021
finance minister
You can see more ways to make money here: see more here
You can see more ways to make money here: see more here

21 thoughts on “Nadeem Malik Live – Exclusive Interview of Finance Minister Shaukat Tarin – #SAMAATV – 23 Nov 2021 finance minister”

  1. Poor projections and stupid answers. Depress with shaukat tarin. Government can raise 300-350 billion from the dividends they can get from state owned enterprises. He must think on it.

  2. ہر عدالت میں دو قانون ہوتے ہیں ایک غریب کا قانون اور امیر کا قانون
    (مجرم جج اور وکیل) پیسوں کے لیے اپنی ماں، بہن، بیٹی کو بیچ سکتے ہیں۔ پاکستان زندہ باد۔ فہیم اختر جرمن

  3. I told you yesterday that you pretend to know economy but I hope today you must have realised that you have limited knowledge about economy. Good job financial advisor.

  4. Incompetent government failed to touch the core issue which is corruption only. The fact of the matter is all government departments are corrupt and incompetent. They are living a lavish life style at the cost of hard earn people's money. There must be a death penalty for corrupt officials. Else all the rest just drama. Things will be getting worse day by day, All money will go in their pockets.

  5. . محترم سر جاوید چوھدری صاحب :
    آپ ایک وقت میں تقریباً ان گنت ڈھنوں کے مردہ احساسات کے بنیادی طبق روشن کر دیتے ھیں… آب سے مل کر بہت بنیادی ایجوکیشنل ٹیلنٹ سکلز کو کار آمد بنانا چاھتا ھوں…
    پلیز مجھے اُمید ھے آپ سپورٹ کریں گے جس ایلیمنٹ کی ایک پکے پاکستانی کی بنیادی ضرورت ھے.. شکریہ

  6. The only person in the PTI's government who has clarity about what he is doing. When someone tells the truth with clarity and honesty, he leaves a very good impression like Shaukat Tareen!

  7. ۔ اتحاد امت کیلئے، آپ اپنا بےسند مسلک چھوڑ کر خالص رب کے حکم مطابق درست مسلک اپنائیں گے؟
    سورہ الآنعام 161 مطابق تمام انبیاء اور اہل ایمان کا درست مسلک صرف طریقہ ابراہیم علیہ السلام ہے۔
    ۔ جب کہ تمہارے مسلک بےسند ہیں، جن پر قرآن مطابق دین سے کنفرم خارج اور مشرک ہو۔

  8. 🍀 ایڈوکیٹ اظہر صدیق صاحب، شریف انسان ہیں مگر ان چور اچکوں کو پالنے بچانے، این آر او، دلوانے ان کو پلیٹیں گرا کر فرار کروانے والوں، سات ارب کو بدل کر پچاس روپے کا پاکستان کے منہ۔پر تھپڑ مارنے والوں، ان چوروں کی زندگی کی گارنٹی مانگنے والوں کا ساتھ دے کر، قوم کو چوروں کی چین آف کمانڈ سمجھاتے ہیں۔ یہ چور اچکے شریف زرداری چور چوہدری برادران، منشیات رانے عباسی، سب بڑے ٹھگ سمگلر، اشارے کے منتظر ذخیرہ اندوز، مہنگائی مافیا سب اسٹیبلشمنٹ کے۔کماو پُتر ہیں۔ یہ مال۔و دولت جائیدادوں، اولادوں کا دھندہ اور نشہ ہی ایسا ہے۔ یہ چور اچکے مالکوں کو کھلانے پلانے کے زعم میں مالکوں پر بھونکنے لگے ہیں۔ اور ان کے ذہنی معذور مگر گندگی، غلاظت اور جھوٹ کے ٹیوشن زدہ کرپشن میں نہاے شاطر بچوں کے آگے گالیاں سن کر کان پکڑ کر مرغے بنے ہوئے مالکوں کو تھوڑا سا ہی غصہ آتا ہے۔ ان بھتیجے بھانجوں سے عِیدیاں جو مٹھورنی ہیں۔ یہ چور اچکوں کرپشن کی چین آف کمانڈ ہے جس پر پاکستان چلتا ہے۔ عمران خان کو اسٹیبلشمنٹ، گیٹ چار میڈیا یا افراد سے کرپشن کی الف ب یعنی چین آف کمانڈ سیکھنی۔پڑے گی ورنہ وہ نا تجربہ کار کہلائے گا، بقول گیٹ چار میڈیا کے۔ زرداری شریف چوہدری چور برادران اور الیکشن دھاندلیوں سے تھیلے پھاڑ- ٹھپے۔لگا کر، مردوں بیرون ملک پاکستانیوں اور مُردوں کے بیشتر حلقوں میں 100% سے بھی زیادہ ڈلوآئے گئے اسٹیبلشمنٹ کےآٹو ووٹ، آر ٹی ایس کر کے لائے جانے والے، ماجے گامے، لگڑ بگڑ دھامڑے گامڑے، جاہل۔ رج کے بھوکے ننگے، باندر، جو اسٹیبلشمنٹ کے ٹوئلٹ پیپر ہوتے ہیں، سب گیٹ چار کے تجربہ کار لوگ ہیں۔ جو بوقت ضرورت این آر او دلوانے کے لیے کمر میں چھرے گھونپنے کے۔لیے۔پالے۔لائے جاتے ہیں۔ یہ سارا کرپشن کا پیچیدہ نظام اور چین۔آف۔ کمانڈ۔ ہے،جو چلتا ہی انہی۔پالتو شریفوں زرداریوں جیسے پالتو حیوانوں کی چین آف کرپشن سے ہے۔ اظہر صاحب کے پیچیدہ دوستوں نےکئی سالوں اسی نیک کام سے پاکستان کو اغوا کر رکھا ہے۔ جب تک اظہر صاحب کے دوست ان چور اچکوں کو پالتے بچاتے رہیں گے اللہ پاکستان پر ان چور اچکوں کی بارش، زالہ باری کا عزاب نازل کرتا رہے گا۔ اسہی دجالیت کا حساب آخرت میں اظہر صاحب کے دوستوں نے دینا ہے، لیکن ان کا آخرت پر یقین انہی چور اچکوں جتنا ہی پختہ ہے۔ انہی چور اچکوں کا ایک ایک بندہ برقعہ پہن کر جاکر گوڈوں کو ہاتھ لگا کر آجائے گا اور دوبارہ سے مست قلندر دھمال سے کرپشن کرپشن، کبڈی کبڈی کا کام شروع کر دیا جاتا ہے۔ پاکستان سے۔یہی کھلواڑ شروع ہی سے ہوتا آرہا ہے۔ یہ سب ایک بھوکے ننگوں کا elitism الیٹزم, مافیا کا دجالی نظام ہے۔ اظہر صاحب اللہ توبہ کرنے والے شریف انسان ہیں، مجبوراً رسم دنیا کی خاطر اس دجالیت کی چین آف کمانڈ کی گاڑی کے پہیوں میں پھنس کر ساتھ ساتھ گھسٹتے جارہے ہیں tiger by the tail. اللہ سب کو حوصلہ دے کہ اصل کینسر۔کا علاج کرنے ڈھونڈنے کا بندوبست کریں تا کہ این آر اوز کے لیے ہر چند دن بعد ملک میں اسٹیبلشمنٹ کو چور اچکے مِرزے یاروں کی دھمال نہ ڈلوانی پڑے۔ آمین! ۔۔۔ لو کر لو گل۔ 🤔

  9. 🍀 ایڈوکیٹ اظہر صدیق صاحب، شریف انسان ہیں مگر ان چور اچکوں کو پالنے بچانے، این آر او، دلوانے ان کو پلیٹیں گرا کر فرار کروانے والوں، سات ارب کو بدل کر پچاس روپے کا پاکستان کے منہ۔پر تھپڑ مارنے والوں، ان چوروں کی زندگی کی گارنٹی مانگنے والوں کا ساتھ دے کر، قوم کو چوروں کی چین آف کمانڈ سمجھاتے ہیں۔ یہ چور اچکے شریف زرداری چور چوہدری برادران، منشیات رانے عباسی، سب بڑے ٹھگ سمگلر، اشارے کے منتظر ذخیرہ اندوز، مہنگائی مافیا سب اسٹیبلشمنٹ کے۔کماو پُتر ہیں۔ یہ مال۔و دولت جائیدادوں، اولادوں کا دھندہ اور نشہ ہی ایسا ہے۔ یہ چور اچکے مالکوں کو کھلانے پلانے کے زعم میں مالکوں پر بھونکنے لگے ہیں۔ اور ان کے ذہنی معذور مگر گندگی، غلاظت اور جھوٹ کے ٹیوشن زدہ کرپشن میں نہاے شاطر بچوں کے آگے گالیاں سن کر کان پکڑ کر مرغے بنے ہوئے مالکوں کو تھوڑا سا ہی غصہ آتا ہے۔ ان بھتیجے بھانجوں سے عِیدیاں جو مٹھورنی ہیں۔ یہ چور اچکوں کرپشن کی چین آف کمانڈ ہے جس پر پاکستان چلتا ہے۔ عمران خان کو اسٹیبلشمنٹ، گیٹ چار میڈیا یا افراد سے کرپشن کی الف ب یعنی چین آف کمانڈ سیکھنی۔پڑے گی ورنہ وہ نا تجربہ کار کہلائے گا، بقول گیٹ چار میڈیا کے۔ زرداری شریف چوہدری چور برادران اور الیکشن دھاندلیوں سے تھیلے پھاڑ- ٹھپے۔لگا کر، مردوں بیرون ملک پاکستانیوں اور مُردوں کے بیشتر حلقوں میں 100% سے بھی زیادہ ڈلوآئے گئے اسٹیبلشمنٹ کےآٹو ووٹ، آر ٹی ایس کر کے لائے جانے والے، ماجے گامے، لگڑ بگڑ دھامڑے گامڑے، جاہل۔ رج کے بھوکے ننگے، باندر، جو اسٹیبلشمنٹ کے ٹوئلٹ پیپر ہوتے ہیں، سب گیٹ چار کے تجربہ کار لوگ ہیں۔ جو بوقت ضرورت این آر او دلوانے کے لیے کمر میں چھرے گھونپنے کے۔لیے۔پالے۔لائے جاتے ہیں۔ یہ سارا کرپشن کا پیچیدہ نظام اور چین۔آف۔ کمانڈ۔ ہے،جو چلتا ہی انہی۔پالتو شریفوں زرداریوں جیسے پالتو حیوانوں کی چین آف کرپشن سے ہے۔ اظہر صاحب کے پیچیدہ دوستوں نےکئی سالوں اسی نیک کام سے پاکستان کو اغوا کر رکھا ہے۔ جب تک اظہر صاحب کے دوست ان چور اچکوں کو پالتے بچاتے رہیں گے اللہ پاکستان پر ان چور اچکوں کی بارش، زالہ باری کا عزاب نازل کرتا رہے گا۔ اسہی دجالیت کا حساب آخرت میں اظہر صاحب کے دوستوں نے دینا ہے، لیکن ان کا آخرت پر یقین انہی چور اچکوں جتنا ہی پختہ ہے۔ انہی چور اچکوں کا ایک ایک بندہ برقعہ پہن کر جاکر گوڈوں کو ہاتھ لگا کر آجائے گا اور دوبارہ سے مست قلندر دھمال سے کرپشن کرپشن، کبڈی کبڈی کا کام شروع کر دیا جاتا ہے۔ پاکستان سے۔یہی کھلواڑ شروع ہی سے ہوتا آرہا ہے۔ یہ سب ایک بھوکے ننگوں کا elitism الیٹزم, مافیا کا دجالی نظام ہے۔ اظہر صاحب اللہ توبہ کرنے والے شریف انسان ہیں، مجبوراً رسم دنیا کی خاطر اس دجالیت کی چین آف کمانڈ کی گاڑی کے پہیوں میں پھنس کر ساتھ ساتھ گھسٹتے جارہے ہیں tiger by the tail. اللہ سب کو حوصلہ دے کہ اصل کینسر۔کا علاج کرنے ڈھونڈنے کا بندوبست کریں تا کہ این آر اوز کے لیے ہر چند دن بعد ملک میں اسٹیبلشمنٹ کو چور اچکے مِرزے یاروں کی دھمال نہ ڈلوانی پڑے۔ آمین! ۔۔۔ لو کر لو گل۔ 🤔

  10. 🍀 ایڈوکیٹ اظہر صدیق صاحب، شریف انسان ہیں مگر ان چور اچکوں کو پالنے بچانے، این آر او، دلوانے ان کو پلیٹیں گرا کر فرار کروانے والوں، سات ارب کو بدل کر پچاس روپے کا پاکستان کے منہ۔پر تھپڑ مارنے والوں، ان چوروں کی زندگی کی گارنٹی مانگنے والوں کا ساتھ دے کر، قوم کو چوروں کی چین آف کمانڈ سمجھاتے ہیں۔ یہ چور اچکے شریف زرداری چور چوہدری برادران، منشیات رانے عباسی، سب بڑے ٹھگ سمگلر، اشارے کے منتظر ذخیرہ اندوز، مہنگائی مافیا سب اسٹیبلشمنٹ کے۔کماو پُتر ہیں۔ یہ مال۔و دولت جائیدادوں، اولادوں کا دھندہ اور نشہ ہی ایسا ہے۔ یہ چور اچکے مالکوں کو کھلانے پلانے کے زعم میں مالکوں پر بھونکنے لگے ہیں۔ اور ان کے ذہنی معذور مگر گندگی، غلاظت اور جھوٹ کے ٹیوشن زدہ کرپشن میں نہاے شاطر بچوں کے آگے گالیاں سن کر کان پکڑ کر مرغے بنے ہوئے مالکوں کو تھوڑا سا ہی غصہ آتا ہے۔ ان بھتیجے بھانجوں سے عِیدیاں جو مٹھورنی ہیں۔ یہ چور اچکوں کرپشن کی چین آف کمانڈ ہے جس پر پاکستان چلتا ہے۔ عمران خان کو اسٹیبلشمنٹ، گیٹ چار میڈیا یا افراد سے کرپشن کی الف ب یعنی چین آف کمانڈ سیکھنی۔پڑے گی ورنہ وہ نا تجربہ کار کہلائے گا، بقول گیٹ چار میڈیا کے۔ زرداری شریف چوہدری چور برادران اور الیکشن دھاندلیوں سے تھیلے پھاڑ- ٹھپے۔لگا کر، مردوں بیرون ملک پاکستانیوں اور مُردوں کے بیشتر حلقوں میں 100% سے بھی زیادہ ڈلوآئے گئے اسٹیبلشمنٹ کےآٹو ووٹ، آر ٹی ایس کر کے لائے جانے والے، ماجے گامے، لگڑ بگڑ دھامڑے گامڑے، جاہل۔ رج کے بھوکے ننگے، باندر، جو اسٹیبلشمنٹ کے ٹوئلٹ پیپر ہوتے ہیں، سب گیٹ چار کے تجربہ کار لوگ ہیں۔ جو بوقت ضرورت این آر او دلوانے کے لیے کمر میں چھرے گھونپنے کے۔لیے۔پالے۔لائے جاتے ہیں۔ یہ سارا کرپشن کا پیچیدہ نظام اور چین۔آف۔ کمانڈ۔ ہے،جو چلتا ہی انہی۔پالتو شریفوں زرداریوں جیسے پالتو حیوانوں کی چین آف کرپشن سے ہے۔ اظہر صاحب کے پیچیدہ دوستوں نےکئی سالوں اسی نیک کام سے پاکستان کو اغوا کر رکھا ہے۔ جب تک اظہر صاحب کے دوست ان چور اچکوں کو پالتے بچاتے رہیں گے اللہ پاکستان پر ان چور اچکوں کی بارش، زالہ باری کا عزاب نازل کرتا رہے گا۔ اسہی دجالیت کا حساب آخرت میں اظہر صاحب کے دوستوں نے دینا ہے، لیکن ان کا آخرت پر یقین انہی چور اچکوں جتنا ہی پختہ ہے۔ انہی چور اچکوں کا ایک ایک بندہ برقعہ پہن کر جاکر گوڈوں کو ہاتھ لگا کر آجائے گا اور دوبارہ سے مست قلندر دھمال سے کرپشن کرپشن، کبڈی کبڈی کا کام شروع کر دیا جاتا ہے۔ پاکستان سے۔یہی کھلواڑ شروع ہی سے ہوتا آرہا ہے۔ یہ سب ایک بھوکے ننگوں کا elitism الیٹزم, مافیا کا دجالی نظام ہے۔ اظہر صاحب اللہ توبہ کرنے والے شریف انسان ہیں، مجبوراً رسم دنیا کی خاطر اس دجالیت کی چین آف کمانڈ کی گاڑی کے پہیوں میں پھنس کر ساتھ ساتھ گھسٹتے جارہے ہیں tiger by the tail. اللہ سب کو حوصلہ دے کہ اصل کینسر۔کا علاج کرنے ڈھونڈنے کا بندوبست کریں تا کہ این آر اوز کے لیے ہر چند دن بعد ملک میں اسٹیبلشمنٹ کو چور اچکے مِرزے یاروں کی دھمال نہ ڈلوانی پڑے۔ آمین! ۔۔۔ لو کر لو گل۔ 🤔

Leave a Reply

Your email address will not be published.